Thursday, June 30, 2011

خوف خواہش سے جنم لیتا ہے اور خواہش دنیا ہے.جب دنیا کو پیچھے ڈال دیا جائے تو خوف بھی ختم ہو جاتا ہے .در اصل جہاں خواہش ہوتی ہے وہیں کہیں دل میں جہاں اس خواہش کے پودے کی جڑیں ہوتی ہیں یہ خوف اس خواہش کے نا تمام رہ جانے کا خوف بھی سر اٹھانے لگتا ہے

3 comments:

  1. hmm...buhat khoob...

    Jahan jhoot hota hay...wahan bhi khoof janam laita hay...dearest...

    Magar app hameeesha key tarha dil jeet lainay wali baat he lay ker ayeen hain....

    hmm...

    ReplyDelete
  2. Huma
    kye dunia se kutch mufeed kam be liya ja sakta hai, usay pase pusht dale baghair?

    ReplyDelete
  3. shayad dunya ko pasay pusht daal kar hi uss se mufeed kaam liya jata hai Akhtar sahib.. jab 'hasil' dunya nahin balke woh mufeed maqsad/kaam hota hai

    ReplyDelete